• A
  • A
  • A
انڈین مجاہدین کا مشتبہ شدت پسند دہلی پولیس کی حراست میں

ایک سینیئر افسر کے مطابق دہلی پولیس نے بدھ کے روز بٹلہ ہاؤس انکاؤنٹر میں شامل انڈین مجاہدین کے ایک مشتبہ شدت پسند کو گرفتار کیا ہے۔

فائل فوٹو


افسر کے مطابق یہ شدت پسند 2008 کے بٹلہ ہاؤس انکاؤنٹر کے بعد سے فرار تھا۔


افسر نے بتایا کہ عارض خان عرف جنید کو دہلی پولیس کی اسپیشل سیل نے گرفتار کیا۔ 19 ستمبر 2008 کو دہلی کے جامعہ نگر واقع بٹلہ ہاؤس میں ہوئے فرضی انکاؤنٹر معاملے میں چار دیگر لوگوں کے ساتھ عارض خان بھی موجود تھے۔

انیس ستمبر 2008 میں ہوئے بٹلہ ہاؤس انکاؤنٹر کے دوران جنید فرار ہونے میں کامیاب ہوگیا تھا۔ حالانکہ اس حادثہ میں انڈین مجاہدین کے دو شدت پسند مارے گئے تھے اور متعدد کو گرفتار کیا گیا تھا۔ اسی حادثے میں پولیس آفیسر و انکاؤٹر اسپیشلسٹ موہن چند شرما بھی ہلاک ہو گئے تھے۔

دہلی پولیس کے اسپیشل سیل کے ڈی سی پی پرمود سنگھ کشواہا نے آج یہاں پریس کانفرنس میں بتایا کہ عارض عرف جنید 2008میں ہوئے دہلی سلسلہ وار بم دھماکے کے علاوہ کئی سیریل بم دھماکوں میں ملوث ہے۔ انہوں نے کہا وہ بم بنانے کا ماہر ہے۔ سازش رچنے میں بھی اس کا اہم کردار ہے۔ وہ جن واقعات میں شامل ہے اس میں کم از کم 165 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

سنگھ نے کہا کہ وہ عاطف امین کا معاون تھا جسے انکاؤنٹر میں ہلاک کیا گیا تھا۔ اترپردیش میں 2007 میں ہوئے دھماکے میں بھی یہ مطلوب تھا اس کے علاوہ جے پور اور احمد آباد میں ہوئے 2008 بم دھماکے میں بھی عارض مبینہ طور پر ملوث تھا۔

بٹلہ ہاؤس معاملے میں مقامی عدالت نے سال 2013 میں انڈین مجاہدین کے شدت پسند شہزاد احمد کو عمر قید کی سزا سنائی تھی۔ مقامی عدالت کے فیصلے کے خلاف احمد نے ہائی کورٹ میں اپیل دائر کی ہے جو ابھی زیر التوا ہے۔

CLOSE COMMENT

ADD COMMENT

To read stories offline: Download Eenaduindia app.

SECTIONS:

  होम

  राज्य

  देश

  दुनिया

  क्राइम

  खेल

  मनोरंजन

  इंद्रधनुष

  सहेली

  गैलरी

  टूरिज़्म

  اردو خبریں

  ଓଡିଆ ନ୍ୟୁଜ

  ગુજરાતી ન્યૂઝ

  MAJOR CITIES